جمعہ، 29 اگست، 2014

میرے مزاج کے رنگوں کو ظاہر کرتی

میرے مزاج کے رنگوں کو ظاہر کرتی 

تازہ غزل !

دیوار میں در رکھنا 
دیوار مگر رکھنا 

پرواز کے موسم تک 
ٹوٹے ہوے پر رکھنا

شیشے کی عمارت ہے 
پتھر کا جگر رکھنا 

حق میرا مجھے دے دو
پھر دار پہ سر رکھنا

جانا ہے عدم بستی 
کیا زاد سفر رکھنا 

پندار بھلے ٹوٹے 
کردار مگر رکھنا

کٹ جاۓ بھلے گردن
دستار میں سر رکھنا 

لمبی ہے شب فرقت
آنکھوں میں سحر رکھنا

سورج سے نہیں خطرہ 
جگنو پے نظر رکھنا

تہذیب کے لاشے کو 
مت لا کے ادھر رکھا 

باطن ہے منور تو 
کیا شمس و قمر رکھنا 

مشکل ہے بہت مشکل 
دل میں تیرے گھر رکھنا 

شعروں میں حسیب اپنے 
کچھ لعل و گہر رکھنا 

حسیب احمد حسیب

ایک تبصرہ شائع کریں