سوموار، 13 جنوری، 2014

مختصر افسانہ " ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﻧﻘﻞ ﻣﮑﺎﻧﯽ "

مختصر افسانہ 
ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﻧﻘﻞ ﻣﮑﺎﻧﯽ

ﻣﺎﻟﮏ ﻣﮑﺎﻥ ﮐﺎ ﻧﻮﭨﺲ ﺁ ﮔﯿﺎ
" ﺍﯾﮏ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺧﺎﻟﯽ ﮐﺮ ﺩﻭ "
یہ جملے کیا ہیں بس ایسا لگتا ہے کاندھوں پر ایک بوجھ آن پڑا ہے مضطرب حواس مجتمع کرنے تک کا وقت کافی تکلیف دہ ہوتا ہے نہ کیا کہوں ذہن ہے کے دوڑا چلا جا رہا ہے سوچیں ہیں کہ بےقابو ہیں ہلکی سی ٹیس ہے جو لاشعور کے کسی خانے میں رہ رہ کر اٹھتی ہے 
ﺫﺭﺍ ﺣﺴﺎﺏ ﺗﻮ ﻟﮕﺎﺅﮞ ﮐﺘﻨﮯ ﻣﺎﮦ ﺳﺎﻝ ﺍﺱ ﻣﮑﺎﻥ ﻣﯿﮟ
ﮔﺰﺭﮮ ﺟﺴﮯ ﮨﻢ ﻧﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﭘﮭﺮ ﯾﮧ
ﻣﮑﺎﻥ ﮨﯽ ﺗﻮ ﮨﮯ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﮐﻞ ﺗﮏ ﺟﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﺍﭘﻨﺎ ﺗﮭﺎ ..
ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﭘﮩﻠﯽ ﺑﺎﺭ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﻧﺠﺎﻧﮯ ﮐﺘﻨﯽ ﻧﻘﻞ ﻣﮑﺎﻧﯿﺎﮞ
ﭘﮩﻠﮯ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮐﺮ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ﯾﺎﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺘﻨﮯ ﮔﮭﺮ کتنے
ﻋﻼﻗﮯ ﮐﺘﻨﮯ ﻣﺤﻠﮯ ...
ﮨﻢ ﺍﯾﺴﮯ ﻧﻘﻞ ﻣﮑﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﮭﯽ ﻋﺠﯿﺐ ﮨﮯ ﻧﺎ
ﯾﮧ ﺩﮐﺎﻥ ﮐﺘﻨﯽ ﺍﭼﮭﯽ ﮨﮯ ﺍﺳﮑﺎ ﺳﻮﺩﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ
ﺳﻤﺠﮫ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ اور ماں کو کہیں کا سودہ سمجھ آجانے یہ کوئی آسان تو نہیں اب کون پچھلے محلے کی کسی دکان تک پریڈ کرے مشکل ہے
ﯾﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﺑﺲ ﺳﯿﺪﮬﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﮯ ﮐﺎﻟﺞ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ
تعلیمی مشقت کی تکان اور پھر سفر کی صعوبتیں یہاں کتنی آسانی تھی اب کیا کروں کہاں جاؤں سمجھ نہیں آتی
ﯾﮩﺎﮞ ﻗﺮﯾﺐ ﮨﯽ ﺍﺣﻤﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﻓﺲ
ﺗﮏ ﻟﻔﭧ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ
صبح صبح کتنا مشکل لگتا ہے بس کی چھت یا پچھلے دروازے کے ساتھ لگے پائیدان سے لٹک کر آفس جانا اور پھر ٹرافک جام لوگوں سے تو تکار اور اس مشقت کے بعد آفس میں باس کی ڈانٹ ایسے ہی لگتی ہے جیسے کسی نے سخت سردی میں یخ بستہ پانی انڈیل دیا ہو

ﯾﮧ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺍﭼﮭﺎ تھا ﺍﺳﮑﺎ ﻋﻼﺝ ﮨﻤﯿﮟ ﻣﻮﺍﻓﻖ بھی ﺁﺗﺎ تھا اسکی فیس بھی تو مناسب تھی اب پتا نہیں کہاں گھر ملے کتنا موقع کا مکان تھا یہ بھی

اب پھر نوٹس آیا پڑا ہے
" ﺍﯾﮏ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺧﺎﻟﯽ ﮐﺮ ﺩﻭ "
کبھی کبھی باغی دل کہتا ہے کیوں کر دوں کیسے کر دوں ابھی تو کچھ ہی دنگزرے ہیں لیکن دماغ سمجھاتا ہے پگلے نقل مکان خانہ بدوش بھی کہیں ٹکتے ہیں
اب ﭘﮭﺮ ﺗﻼﺵ ﮔﻠﯽ ﮔﻠﯽ ﻣﺤﻠﮯ ﻣﺤﻠﮯ
ﻋﺠﯿﺐ ﻋﺠﯿﺐ ﮔﻨﺪﮮ ﺑﺪﺑﻮ ﺩﺍﺭ ﮐﮭﻨﮉﺭ ﻧﻤﺎ ﻣﮑﺎﻥ
ﺑﮍﮮ ﺑﮍﮮ ﻟﮕﺰﺭﯼ ﺑﻨﮕﻠﮯ
ﻧﮩﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ
ﮨﻢ ﺍﺗﻨﮯ ﻏﺮﯾﺐ ﻧﮩﯿﮟ
ﮨﻢ ﺍﺗﻨﮯ ﺍﻣﯿﺮ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ
کچھ ﺩﺭﻣﯿﺎﻧﮧ ﮨﻢ ﻟﻮﺋﺮ ﻣﮉﻝ ﮐﻼﺱ ﮨﯿﮟ ﺟﻨﺎﺏ
اور ایک پورا کرایہ اجنسی والے کی نظر کیا کیجئے اسکے بغیر مکان ملتا نہیں اعتبار جو نہیں رہا کسی کو کسی پر ....
سوچتا ہوں
ﮐﺘﻨﯽ ﯾﺎﺩﯾﮟ ﺍﺱ ﻣﮑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﻮﮌﮮ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﯾﮩﺎﮞ ﭼﮭﻮﭨﻮ ﭘﯿﺪﮦ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ
ﯾﮩﺎﮞ ﺑﮍﮮ ﺑﮭﯿﺎ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ
ﯾﮩﺎﮞ ﮐﺘﻨﮯ ﺍﭼﮭﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﺑﻦ ﮔﮱ ﺗﮭﮯ
ﺑﺲ کچھ ﻟﻤﺤﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻧﺌﯽ ﺟﮕﮧ ﻧﮱ ﻟﻮﮒ ﻧﯿﺎ ﻣﮑﺎﻥ ﺟﺴﮯ ﮨﻢ
ﺑﮍﯼ ﻣﺤﻨﺖ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﺳﮯ ﮔﮭﺮ ﺑﻨﺎﺋﯿﻨﮕﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﺎﻟﮏ
ﻣﮑﺎﻥ ﮐﺎ ﻧﻮﭨﺲ ﺁ ﺟﺎﮰ ﮔﺎ
" ﺍﯾﮏ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺧﺎﻟﯽ ﮐﺮ ﺩﻭ "
ہاں ہاں کر دینگے ضرور کر دینگے چھری تلے سانس تو لو !
یہ گردش دوراں بھی نہ
کہیں ایک شعر پڑھا تھا نجانے کیوں یاد آگیا

مرجائینگے مرجائینگے کیوں سر پے کھڑی ہے
اے گردش دوراں تجھے کیا موت پڑی ہے

اے مالک مکان تجھے کیا موت پڑی ہے
کیا موت پڑی ہے ...............
......................
.................

سوچتا ہوں
ﮐﺘﻨﯽ ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﺟﯽ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ ﭘﭽﮭﻼ ﻣﺤﻠﮧ ﻭﮨﺎﮞ ﮐﺎ
ﭘﮍﻭﺱ ﻭﮨﺎﮞ ﮐﺎ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﮐﺘﻨﺎ ﺍﭼﮭﺎ ﺗﮭﺎ
ﺍﻭﺭ ﮐﺘﻨﯽ ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺟﯽ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ
سامنے کی ہر چیز اپنے ساتھ یادوں کا ایک ریلا بہاۓ لاتی ہے
میں اماں ابّا بھیا چھوٹو سب گھر والے ہمیشہ ایسے ہی لڑتے ہیں
ﻧﮩﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﯾﮧ ﺍﻟﻤﺎﺭﯼ ﺍﺱ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﮯ ساتھ ﭨﮭﯿﮏ ﻧﮩﯿﮟ
ﯾﮧ ﭘﯿﻨﭩﻨﮓ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﺘﻨﯽ ﺟﭻ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ
ﻗﺎﻟﯿﻦ ﯾﮩﺎﮞ ﺑﭽﮭﮯ ﮔﺎ.....
.........
کمرے کو دیکھ کر کتنی ہی یادیں سر اٹھاتی ہیں
ﺍﺱ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﺘﻨﯽ ﻣﺤﺎﻓﻞ
ﺳﺠﺎﺋﯽ ﺗﮭﯿﮟ
ہاں
ﯾﺎﺩ ﮨﮯ ﭼﮭﺖ ﭘﺮ ﺭﻣﻀﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺍﻭﯾﺢ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ
ﻧﯿﭽﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺧﺎﻟﮧ ﮐﮯ ہاتھ ﮐﮯ ﺑﻨﮯ ﭘﮑﻮﮌﮮ ﮐﺘﻨﺎ ﻟﻄﻒ
ﺩﯾﺘﮯ ﺗﮭﮯ
ﻗﺮﯾﺐ ﮐﯽ ﻣﺴﺠﺪ ﮐﮯ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﺎ ﺩﺭﺱ ﮐﺘﻨﺎ ﺍﺛﺮ
ﺍﻧﮕﯿﺰ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﮭﺎ
ﻣﮕﺮ ﭘﮭﺮ اس ﻣﺎﻟﮏ ﻣﮑﺎﻥ ﻧﮯ ﻧﻮﭨﺲ ﺑﮭﯿﺞ ﺩﯾﺎ
" ﺍﯾﮏ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺧﺎﻟﯽ ﮐﺮ ﺩﻭ "
کردینگے تمہارا مکان خالی گھر نہیں ہے یہ گھر تو اسے ہم نے بنایا تھا

ہر دفع کی کہانی اماں جھنجلا کر کہتی ہیں
ﯾﮧ ﺑﺮﺗﻦ ﮐﺘﻨﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﺳﮯ ﺧﺮﯾﺪﮮ ﺗﮭﮯ ﺷﻔﭩﻨﮓ ﻣﯿﮟ ﭨﻮﭦ
ﮔﮯ چلو اچھا ہوا ٹوٹ گۓ
میں جھنجلا کر بڑبڑاتا ہوں
ﮐﺘﻨﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﺟﻮﮌ ﮐﺮ ﯾﮧ ﺻﻮﻓﮧ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺷﺎﯾﺪ کچھ ﺩﻥ
ﺁﻓﺲ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﭘﮩﺮ ﮐﺎ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻨﮕﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺑﭽﺖ ﮨﻮ ﺟﺎﮰ
ﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﻮﭨﺮ ﺳﺎﺋﮑﻞ ﮐﮩﺎﮞ ﮐﮭﮍﯼ ﮐﺮﻭﻧﮕﺎ
ﺍﺱ ﻣﯿﺰ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﮕﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﮔﻼ ﮔﮭﺮ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﮨﮯ
ﯾﮧ ﻣﯿﺰ ﮐﯿﺴﮯ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﻭﮞ
ﺍﺳﭙﺮ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﺘﺎﺑﯿﮟ ﺳﺠﺎ ﮐﺮ ﺍﻣﺘﺤﺎﻥ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ
ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ
ﮐﺘﻨﯽ ﺭﺍﺗﻮﮞ ﺁﻓﺲ ﮐﺎ ﮐﺎﻡ ﺍﺳﭙﺮ ﻓﺎﺋﻠﯿﮟ ﺑﮑﮭﯿﺮﮮ ﮐﺮﺗﺎ ﺭﮨﺎ
ﺍﭘﻨﺎ ﭘﮩﻼ ﮐﻤﭙﯿﻮﭨﺮ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﺍﺳﭙﺮ ﮨﯽ ﺭﮐﮭﺎ ﺗﮭﺎ
یادیں یادیں یادیں
اچانک کہیں ایک چڑیا چہچہاتی ہے
ﯾﮧ ﭼﮍﯾﺎ ﺟﺴﮑﻮ ﺭﻭﺯ ﺩﺍﻧﮧ ﭘﺎﻧﯽ ﮈﺍﻟﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﺘﻨﯽ ﻣﺎﻧﻮﺱ
ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ......

اور ایک وہ چڑیا جو پہلے کبھی کسی مکان میں چھوڑ آیا سنا ہے اسکو اسکا چڑا مل گیا
چلو اچھا ہوا یہ دل بھی نہ عجیب ہے بےوقت دھڑکتا ہے کسی کے نام پر کیا کروں پاگل جو ہے نہ .........

سوچتا ہوں
ﮐﺘﻨﯽ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﮐﺘﻨﮯ ﻟﻮﮒ ﮐﺘﻨﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮐﺘﻨﮯ ﻟﻤﺤﮯ
ﺳﺐ ﮐﯿﺴﮯ ﺳﻨﺒﮭﺎﻝ ﮐﺮ ﺭﮐﮭﻮﮞ
ﯾﮧ ﻣﮑﺎﻥ ﻣﯿﺮﺍ ﻣﮑﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ
ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﮔﮭﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺎﻧﺪﮬﻮﮞ ﭘﺮ ﺍﭨﮭﺎﮰ ﻧﺠﺎﻧﮯ ﮐﺘﻨﮯ
ﺳﺎﻟﻮﮞ ﺳﮯ ﮔﻠﯿﻮﮞ ﮔﻠﯿﻮﮞ ﭘﮭﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ
ﺍﯾﮏ ﻣﮑﺎﻥ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻣﮑﺎﻥ ﺗﮏ
ﺟﺐ ﺗﮏ ﻧﻮﭨﺲ ﻧﮧ ﺁ ﺟﺎﮰ
" ﺍﯾﮏ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺧﺎﻟﯽ ﮐﺮ ﺩﻭ "
ﺣﺴﯿﺐ ﺍﺣﻤﺪ ﺣﺴﯿﺐ
ایک تبصرہ شائع کریں