ہفتہ، 4 جنوری، 2014

مناجات !

مناجات !

پورے میں کروں مدحت آقا کے تقاضے 
ہر  شاخ   تخیل  پے  میری نور اگا دے

آقا کی شریعت پے میں عامل رہوں تا دم 
یا رب  مجھے آداب غلامی کے سکھا دے 

ہو جاۓ میری خاک مدینے  میں  پریشاں
رخصت کے ہر اک گام پے دیوار اٹھا دے 

اک  روز  چلا  جاؤں  اچانک  میں مدینے
مولا مجھے اس خواب کی تعبیر دکھا دے

ہے لطف کے ہم زیست کے پیاسوں کومےءعشق
ہاتھوں  سے   اگر    ساقی کوثر کے   پلا دے

آقا  کی  شریعت  کے  ہوں  انوار  یہاں   پر
مالک  میری  بستی  میں وہ  ماحول بنا دے

حسیب احمد حسیب      

ایک تبصرہ شائع کریں