سوموار، 12 نومبر، 2012

غزل

                                                                غزل 


مجھ   سے   بچھڑ کر جان    جاناں تمکو کوئی غم تو نہیں ہے 
میری   پلکیں   ہی   بھیگی ہیں   آنکھ تمہاری نم تو  نہیں ہے !

وحشت دل  ،  بے درد    زمانہ ،  اور  دہکتی     تنہائی   ہے   
اک  غزل  کے  ہو   جانے   کو یہ موقع کچھ کم تو نہیں ہے !

اتنے   برس   کے   بعد   بھی   اسنے آج  ہمیں پہچان لیا ہے 
اسکی آنکھوں،  میں جو لکھا ہے  کچھ اتنا مبہم تو نہیں ہے !

لوگوں   نے  بیکار   میں  ہمکو   لوگوں میں   بدنام   کیا ہے 
اسکی   گلی میں    آنا جانا   کچھ   اتنا   پیہم   تو   نہیں ہے !

اسکے   ہاتھ کی   ریکھاؤں   میں   اب  بھی شاید نام ہے میرا 
ہجرکےدھارےمیں ہی کہیں پروصل کااک سنگم تو نہیں ہے !

سرد   ہوا   برسات  برستی   گھور اندھیرے   کا   عالم   ہے 
آج   یہیں   پر   رک   جاؤ   تم   جانے  کا موسم تو نہیں ہے !

پھر   اسکے   دیدار   کو   احمد    دل   اپنا    بیتاب    ہوا ہے 
لیکن   اسکے   گھر   کی مسافت کچھ اتنی بھی کم تو نہیں ہے !

حسیب احمد حسیب 

ایک تبصرہ شائع کریں